Accessibility

Accessibility

Website Zoom

Color/Contrast

Download Reader

The Sitting of the National Assembly has been adjourned to meet again on Thursday, the 20th June, 2024, at 5:00 p.m.
Print Print

Enhancing Parliamentary outreach and transforming parliament into a goal-orientated legislative Institution must be the key goal of the 4th National Assembly Strategic Plan says NA Speaker

Wednesday, 15th May, 2024

Islamabad: 15th May 2024: Speaker National Assembly Sardar Ayaz Sadiq has said that enhancing parliamentary outreach is key to abridging space between public representatives and the public. He expressed, “Digitalization is key to transforming Parliament into a goal-orientated organization that produces quality and public responsive legislation. He, further, emphasized the need to strengthen parliamentary staff through robust training. He expressed these views while chairing the 1st meeting of the National Assembly Strategic Plan Committee Special in Parliament House Islamabad.


While emphasizing the need to evolve a strong monitoring system for enhancing the efficiency of parliamentary supporting staff, he said that proper training and effective performance evaluation can render them more productive. He expressed, “Strengthening standing committees is essential for ensuring quality legislation.” ‘Women Parliamentary Caucus, Secretariat of Sustainable Development Goals, Young Parliamentarians Forum, Pakistan Institute of Parliamentary Services (PIPS), and other parliamentary forums play proactive roles in enhancing parliamentary efficiency.  Furthermore, he said that rationalization of the budget as per the strategic plan would make it more implementable and rational.

While deliberating upon the contours for the formation of the strategic plan, Committee members unanimously decided to make a strategic plan led by parliamentarians. MNA Syed Naveed Qamar has said that social media has gained undeniable importance in their age of social media and developing an independent proactive social media department to engage common users in parliamentary activities. MNA Nafisa Shah highlighted the importance of magnifying the constitutional role of Parliament, assessing members’ engagement, and taking beneficial insight from parliamentary staff would make the strategic plan more feasible and productive. Meanwhile, MNA Bilal Kiayni also briefed the committee about the in-depth and marathon exercise undertaken under Honourable Speaker Ayaz Sadiq to interview each employee of the National Assembly. Federal Minister for IT Shaza Fatima Khawaja highlighted the need to modernize and digitalize the parliament. She also said that the provision of efficient services to Parliamentarians must also be the focus of Strategic Plan. Ms Romina Khursheed Alam, Special Assistant to the Prime Minister also expressed the need to make PIPS more proactive. MNA Sharmila Farooqi emphasized to provide quality research to Honourable members for effective legislation.

Deputy Speaker National Assembly Syed Ghulam Mustafa Shah, MNAs Shahram Khan Taraqai, Zain Hussain Qureshi, Ms.Munaza Hassan, Ms.Nafisa Shah, Former ED PIPS Zafrullah, Yasmeen Rehman and Senior officers of PIPS and National Assembly Secretariat also attended the meeting.


 عوام کی پارلیمنٹ تک رسائی کو بڑھانااور پارلیمان کو  ایک موثر قانون ساز ادارا بنانا قومی اسمبلی کے اسٹریٹجک پلان کا اہم ہدف ہے، اسپیکر قومی اسمبلی

 اسلام آباد: 15 مئی 2024: اسپیکر قومی اسمبلی سردار ایاز صادق نے کہا ہے کہ عوامی نمائندوں اور عوام کے درمیان فاصلہ کم کرنے کے لیے پارلیمانی رسائی کو بڑھانا کلیدی اہمیت کا حامل ہے۔پارلیمنٹ کو ڈیجیٹلائزیشن میں تبدیل کر کہ ایک معیاری اور عوامی اہمیت کے حامل قانون ساز ادارہ بنانا اولین ترجیح ہے جس میں عوامی فلاح وبہبود کے لیے موثر قانون سازی کی جا سکے۔پارلیمانی عملے کے استعداد کار میں اضافے کیلئے تربیتی پروگرام منعقد کرانے کی ضرورت ہے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے پارلیمنٹ ہاؤس اسلام آباد میں قومی اسمبلی کی اسٹریٹجک پلان کمیٹی کے خصوصی اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کیا۔

اسپیکر نے کہا کہ پارلیمانی معاون عملے کی کارکردگی کو بڑھانے کے لیے ایک موثر نگرانی کا نظام وضع کرنے کی ضرورت ہے تاکہ مناسب تربیت اور کارکردگی کا موثر جائزہ انہیں مزید نتیجہ خیز بنا سکے۔  انہوں نے کہا کہ معیاری قانون سازی کو یقینی بنانے کے لیے قائمہ کمیٹیوں کا فعال اور موثر کردار ادا کرنا ضروری ہے۔ خواتین پارلیمانی کاکس، پائیدار ترقی کے اہداف کا سیکرٹریٹ، ینگ پارلیمنٹرینز فورم، پاکستان انسٹی ٹیوٹ آف پارلیمانی سروسز (PIPS) اور دیگر پارلیمانی فورمز پارلیمانی کارکردگی کو بڑھانے میں فعال کردار ادا کر سکتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ سٹریٹجک پلان کے مطابق بجٹ کو ریشنلائز کرنا اسے مزید قابل عمل  بنائے گا۔

 سٹریٹجک پلان کی تشکیل کے حوالے سے غور و خوض کرتے ہوئے کمیٹی کے ارکان نے متفقہ طور پر پارلیمنٹرینز کی قیادت میں سٹریٹجک پلان بنانے کا فیصلہ کیا۔ ممبر قومی اسمبلی سید نوید قمر نے کہا ہے کہ سوشل میڈیا کے دور میں سوشل میڈیا نے ناقابل تردید اہمیت حاصل کر لی ہے اور عام صارفین کو پارلیمانی سرگرمیوں میں شامل کرنے کے لیے ایک خودمختار فعال سوشل میڈیا ڈیپارٹمنٹ تیار کیا جا رہا ہے۔ ممبر قومی اسمبلی نفیسہ شاہ نے پارلیمنٹ کے آئینی کردار کو بڑھانے، اراکین کی مصروفیات کا اندازہ لگانے اور پارلیمانی عملے سے موثر کام لینے کی اہمیت پر روشنی ڈالی جو اسٹریٹجک پلان کو مزید قابل عمل اور نتیجہ خیز بنائے گی۔

دریں اثناء ممبر قومی اسمبلی بلال کیانی نے بھی کمیٹی کو سپیکر ایاز صادق کی قیادت میں قومی اسمبلی کے ہر ملازم کا انٹرویو لینے کے لیے کی گئی میراتھن مشق کے بارے میں آگاہ کیا۔  وفاقی وزیر برائے انفارمیشن ٹیکنالوجی (آئی ٹی) شیزہ فاطمہ خواجہ نے پارلیمنٹ کو جدید اور ڈیجیٹل بنانے کی ضرورت پر روشنی ڈالی۔ انہوں نے کہا کہ پارلیمنٹیرینز کو موثر خدمات کی فراہمی کو بھی اسٹریٹجک پلان کا فوکس ہونا چاہیے۔ وزیراعظم کی معاون خصوصی محترمہ رومینہ خورشید عالم نے بھی PIPS کو مزید فعال بنانے کی ضرورت کا زور دیا۔ محترمہ شرمیلا فاروقی نے ممبران کی استعداد کار کو بڑھانے کے لیے تحقیق کی اہمیت کو اجاگر کیا -

اجلاس میں ڈپٹی اسپیکر قومی اسمبلی سید میر غلام مصطفیٰ شاہ، ممبران قومی اسمبلی شہرام خان تراکئی، زین حسین قریشی، محترمہ منزہ حسن، محترمہ نفیسہ شاہ، محسن لغاری، سابق ای ڈی پیپس ظفر اللہ خان، یاسمین رحمان،  پیپس اور قومی اسمبلی سیکرٹریٹ کے اعلیٰ افسران نے شرکت کی۔