Accessibility

Accessibility

Website Zoom

Color/Contrast

Download Reader

The Sitting of the National Assembly has been adjourned to meet again on Thursday, the 20th June, 2024, at 5:00 p.m.
Print Print

NA Deputy Speaker Urges Global Action for Cultural Heritage Protection at 6th World Forum on Intercultural Dialogue

Thursday, 2nd May, 2024

Baku, Azerbaijan, Thursday, May 2,2024: Honorable Syed Ghulam Mustafa Shah, Deputy Speaker of the National Assembly of Pakistan has said that legislative bodies have a critical role in safeguarding and promoting cultural heritage. Legislatures enact robust legal frameworks that not only preserve cultural heritage but also address critical aspects such as conservation methodologies, adequate funding mechanisms, and stringent penalties for any acts of damage or destruction.He made these remarks in his address at the Sixth World Forum On Intercultural Dialogue in Baku, Azerbaijan, centered on the theme "The Role and Best Practices of the Legislature in the Protection of Cultural Heritage."



Opening his speech with heartfelt accolades to the organizers and the government of Azerbaijan for organizing successful event, the Deputy Speaker emphasized the profound significance of fostering mutual understanding among diverse cultures as a cornerstone in preserving our collective cultural heritage.

The Deputy Speaker while highlighting the intrinsic value of cultural heritage, noted that the myriad threats faced by cultural heritage in today's interconnected world require urgent need for proactive and concerted measures to ensure its protection and longevity.

Furthermore, the Deputy Speaker emphasized the imperative of fostering collaborative partnerships with stakeholders from governmental agencies, cultural institutions, local communities, and international organizations. This collaborative ethos, he emphasized, is fundamental in developing comprehensive strategies that holistically address the multifaceted challenges facing cultural heritage preservation.

Citing Pakistan's rich tapestry of cultural heritage, ranging from ancient civilizations to vibrant regional cultures, the Deputy Speaker lauded the nation's legislative strides interacting key legal frameworks such as the Antiquities Act of 1975, Pakistan Environmental Protection Act of 1997, and various provincial ordinances aimed at safeguarding heritage sites and regulating archaeological endeavors.

In advocating for best practices, the Deputy Speaker called for the adoption of cutting-edge technologies for documentation, conservation, and promotion of cultural heritage, while also stressing the importance of inclusivity and diversity in these preservation efforts.

Concluding his address with a resolute call to action, the Deputy Speaker urged increased financial allocations, sustainable development practices, and unwavering global collaboration as essential pillars in ensuring the continued preservation and promotion of cultural heritage as a unifying force that transcends generations.He added that the Parliament of Pakistan stands steadfast in its commitment to championing the cause of cultural heritage protection and calls upon the global community to join hands in this noble endeavor.

 

ڈپٹی اسپیکر قومی اسمبلی کا آذربائیجان کے شہر باکو میں منعقدہ چھٹے عالمی فورم برائے بین الثقافتی مکالمے کے شرکاء سے خطاب

 ڈپٹی اسپیکر کا بین الثقافتی مکالمے میں ثقافتی ورثے کے تحفظ کے لیے عالمی سطح پر فوری اقدام کی ضرورت پر زور

   جمعرات، 2 مئی 2024): آذربائیجان کے دارالحکومت باکو سے موصول ہونے والی اطلاعات کے مطابق ڈپٹی اسپیکر قومی اسمبلی سید میر غلام مصطفیٰ شاہ  نے کہا ہے کہ ثقافتی ورثے کے تحفظ اور فروغ میں قانون ساز اداروں کا کردار کلیدی اہمیت کا حامل ہے۔مقننہ ایک مضبوط قانونی ڈھانچہ وضع کرتی ہے جو نہ صرف ثقافتی ورثے کو محفوظ رکھتی ہے بلکہ اس کے ساتھ ساتھ تحفظ اور فنڈنگ کے مناسب طریقہ کار وضع کرتی ہے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے آذربائیجان کے شہر باکو میں"ثقافتی ورثے کے تحفظ میں مقننہ کا کردار اور بہترین طرز عمل" کے موضوع پر منعقد ہونے والے تین روز مکالمہ کے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے کیا جو یکم سے 3 مئی تک آذربائیجان کے دارالحکومت باکو میں منعقد ہو رہا ہے۔ ڈپٹی اسپیکر قومی اسمبلی نے مکالمے کے کامیاب انعقاد پر منتظمین اور آذربائیجان کی حکومت کی کاوشوں کو سراہا۔ ڈپٹی سپیکر نے ثقافتی ورثے کے تحفظ کے لیے ثقافتوں کے درمیان باہمی افہام و تفہیم کو فروغ دینے کی ضرورت پر زور دیا۔انہوں نے کہا کہ عصر حاضر میں ثقافتی ورثے کے تحفظ کو یقینی بنانے کے لیے اجتماعی سطح پر فعال اور ٹھوس اقدامات کرنے کی ضرورت ہے۔

 ڈپٹی سپیکر نے مزید کہا کہ ثقافتی ورثے کے تحفظ کے لیے حکومتی اور ثقافتی اداروں، مقامی آبادیوں، بین الاقوامی تنظیموں کے اسٹیک ہولڈرز کے ساتھ باہمی تعاون کو فروغ دینے کی ضرورت ہے۔انہوں نے کہا کہ ثقافتی ورثے کے تحفظ کو یقینی بنانے اور اس کو درپیش چیلنجوں سے نمٹنے کیلئے جامع لائحہ عمل مرتب کرنے کی ضرورت ہے۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان قدیم تہذیبوں اور علاقائی ثقافتوں کا مسکن ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کے صوبے ثقافتی ورثے کی شاندار ہسٹری رکھتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ پاکستان نے ثقافتی ورثے اور آثار قدیمہ کی حفاظت کے لیے موثر قانون سازی کی ہے جس میں 1975 کے نوادرات ایکٹ، پاکستان انوائر مینٹل پروٹیکشن ایکٹ 1997، اور صوبائی سطح پر آرڈیننس جیسی کلیدی قانون سازی شامل ہے۔انہوں نے ثقافتی ورثے کے مقامات کی حفاظت اور آثار قدیمہ کی کوششوں کو منظم کرنے کے اقدامات کو اجاگر کیا۔ انہوں نے ثقافتی ورثے کی دستاویزات کے تحفظ اور فروغ کے لیے جدید ترین ٹیکنالوجیز کو اپنانے کی ضرورت پر زور دیا۔

ڈپٹی اسپیکر نے ثقافتی ورثے کے تحفظ کیلئے فنڈ میں اضافے اور فروغ کو یقینی بنانے کیلئے  غیر متزلزل عالمی تعاون پر زور دیا۔انہوں نے ثقافتی ورثے کے تحفظ کو یقینی بنانے کے لیے پاکستان کی پارلیمنٹ کے عزم کو دہراتے ہوئے عالمی برادری کو اس سلسلے میں اجتماعی سطح پر کوششیں کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔